راولاکوٹ سے راولپنڈی جاتے ہوئے ہائی ایس جل کر خاکستر

راولاکوٹ(پرل نیوز) پاکستان میں بھینسا ،موچی اور دیگر ناموں سے جعلی پیجز پر اللہ اور اسکے رسول کی شان میں گستاخی کرنے والوں کو حکومت قانون کے کٹہرے میں لائے ،نبی کی ناموس پر جان دینابھی اعزاز سمجھتے ہیں لادینیت نے ہمارے ملک کی بنیادیں کھوکھلی کردی ہیں جسٹس شوکت صدیقی نے عدالت میں حرمت رسول کی پاسبانی کرکے عوام کے دل جیت لیے اغیار کی سازشیں کامیاب نہیں ہونے دیں گے آزادکشمیر میں علماء کرام نے دہریت کے خلاف جنگ لڑی ابھی بھی وہ لڑائی جاری ہے دہریوں ا ور اسلام دشمن عناصر کی بیخ کنی تک اپنا مشن جاری رکھیں گے ان خیالات کااظہار ڈاکٹر علامہ عبدالقدوس خطیب جامعہ محمد یہ غوثیہ راولاکوٹ ،خان عبدالقیوم خان ،سردارافتخار انقلابی ،مسلم ہینڈز انٹرنیشنل ،حاجی طاہر صدیق صدر مرکزی میلاد کمیٹی راولاکوٹ ،اسرار احمد رہنما تحریک منھاج القرآن ،منیر احمد قادری پریس سیکرٹری مسلم ہینڈز ،محمد طاہر نقشبندی جنرل سیکرٹری سنی یوتھ کونسل راولاکوٹ نے پرل ویو فورم سے خطاب کرتے ہوئے کیا مقررین نے کہا کہ لادین عناصر نے ہمارے معاشرے میں کفر کے پھیلاو کے لیے کردارادا کرنا شروع کررکھا ہے اور اسلام کو سیکولر اور لادین بنانے کی انتھک جدوجہد کررہے ہیں،سنگولہ مسجد کی بندش پرا نتظامیہ کی سست روی قابل مذمت ہے مسجد اللہ کا گھر ہے اس کواختلافی مسائل کی بھینٹ نہ چڑھایا جائے ہمارا رشتہ دین کے ساتھ مضبوط ہونا چاہیے اس کو برقرار رکھیں راولاکوٹ میں ا من کی فضاقائم کرنے کے لیے تمام علماء پر منتج ایک پلیٹ فارم ہے جس کے نتیجہ میں ہم نے اس مسئلہ کو حل کرنے کی کوشش کی مسجد کی بندش کے خاتمے کا پرامن حل چاہتے ہیں ا نتظامیہ کی نااہلی ہے کہ سوادوماہ سے مسجد بند ہے روزنامہ پرل ویو علماء کی آواز اورتحریک ہے اسلام کے دفاع کے لیے پرل ویو نے اپنا کردار ادا کیا ہمارا ترجمان ہے یہ اخبار روزنامہ پر ل ویو تعلق کی بنا پر خبر نہیں چھاپتا بلکہ حقیقت کی بنا پر خبر چھاپتا ہے معاشرے کی درست ڈگر میں رہنمائی کے لیے پرل ویو نے وہ کردار اد ا کیا جو کسی اور کے نصیب میں نہیں آیا پرل ویو کے ساتھ ہماری دعائیں شامل رہیں گے اس موقع پرا یڈیٹر انچیف شفقت ضیاء بھی موجود تھے انھوں نے تمام شرکاء کا شکریہ بھی ادا کیا اور اس عزم کا اظہا رکیا کہ پرل ویو حسب روائت اپنا مشن اورتحریک جاری رکھے گادین کے حوالہ سے ہم نے نہ پہلے کمپرومائز کیا اور نہ آئندہ کریں ایڈیٹر انچیف کا مزید کہنا تھا کہ معاشرے کی خرابیوں کے سدباب کے لیے قلمی جہاد جاری رکھوں گا خواہ اس کے لیے کتنی مشکلات کیوں نہ آئیں۔

متعلقہ خبریں

13-03-2018

13-03-2018