15

تعلیمی بورڈ میرپور کے امتحانات کے طریقہ کار،مارکنگ،نتائج کو صاف شفاف بنائیں گے،وزیر ہائیر ایجوکیشن

میرپور (پی آئی ڈی)آزادکشمیر کے وزیر ہائیر ایجوکیشن ظفر اقبال ملک نے کہا ہے کہ آزاد کشمیر میں نظام تعلیم کو جدید تقاضوں سے ہم آہنگ کرنے اور کوالٹی آف ایجوکیشن کو بہتر بنانے کے لیے آزاد جموں وکشمیر تعلیمی بورڈ کا بڑا اہم رول ہے اس سلسلہ میں تعلیمی بورڈ میرپور میں امتحانات کے طریقہ کار،مارکنگ اور نتائج کو صاف و شفاف اور میرٹ پر سو فیصد یقینی بنانے کے لیے تمام ممکنہ اقدامات اٹھائے جارہے ہیں۔تعلیمی بورڈ کے نتائج کے حوالے سے طلباو طالبات کی شکایات کا جائزہ لینے کے لیے ایک اعلیٰ سطعی کمیٹی ڈی پی آئی کالجز خواجہ عبدالرحمن کی سربراہی میں قائم کی گئی ہے تھی جس نے امتحانی نتائج کاہر زاویہ سے جائزہ لیا اور فیصلہ کیا کہ تعلیمی بورڈ کے نتائج میں کوئی بڑے پیمانے پر مارکنگ میں غلطیاں نہیں پائی گئیں ہمارا اولین ٹارگٹ طلباو طالبات ہیں ان کے ساتھ کسی قسم کی زیادتی نہیں ہونے دیں گے۔پسند و ناپسند ہماری حکومت کی ترجیحات میں سرے سے شامل نہیں ہیں۔ہم آزادکشمیر کے ہر شعبہ میں قانون و آئین کی بالادستی اور میرٹ قائم رکھنا چاہتے ہیں۔تعلیمی بورڈ کو آزادکشمیر کا نہیں بلکہ پاکستان کا مثالی بورڈ بنائیں گے۔اس وقت پاکستان وآزادکشمیر میں اگرچہ مالی بحران ہے تاہم تعلیمی انحطاط پر کنٹرول کریں گے اور سرکاری تعلیمی اداروں پر عوام کا اعتماد بحال کرنے کے ساتھ ساتھ پبلک تعلیمی اداروں کی تمام ضروریات پوری کریں گے۔ان خیالات کا اظہار انھوں نے آزاد جموں وکشمیر انٹر میڈیٹ و ثانوی تعلیمی بورڈ میرپور کے دورہ کے دوران حکومت آزادکشمیر کی طرف سے تعلیمی بورڈ میرپور کے امتحانات کے نتائج میں طلبا و طالبا ت کی طرف سے شکایات کے ازالہ کے حوالے سے بنائی گئی کمیٹی کی رپورٹ اور بعدازاں میڈیا نمائندگان سے بات چیت کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پر سیکرٹری ہائیر ایجوکیشن خالد محمود مرزا،ناظم اعلیٰ تعلیمات کالجز خواجہ عبدالرحمن،چیئرمین تعلیمی بورڈ پروفیسر نذر حسین چوہدری،کنٹرولر امتحانات کالجز قاری ملک محمد مشتاق،کنٹرولر امتحانات سکولز راجہ طلعت اسلم،صدر ایمپلائز ایسو سی ایشن یاسر چوہدری،پرائیویٹ سیکرٹری محمد خلیل مرزا،جنرل سیکرٹری محمد شوکت،ڈسٹرکٹ انفارمیشن آفیسر محمد جاوید ملک بھی موجود تھے۔وزیر ہائیر ایجوکیشن ظفر اقبال ملک نے کہا ہے کہ وفاق کی طرف سے 5ارب 20کروڑ روپے نہ ملنے کے باعث تعلیمی اداروں میں سہولیات کی فراہمی بڑا چیلنج ہے۔ مالیاتی بحران کے باوجود حکومت آزادکشمیر پبلک سیکٹر کے تعلیمی اداروں میں کوالٹی آف ایجوکیشن کو بڑھانے کے لیے تعلیمی اداروں میں ضروری سہولیات جن میں عمارات،باؤنڈری وال،میدان،کلاس رومز اورلائبریری،فرنیچر اور سٹاف کی کمی کو پورا کر نے کی کوشش کر رہے ہیں تاکہ ہمارے تعلیمی اداروں میں پرائیویٹ تعلیمی اداروں جیسی سہولیات میسر آسکیں۔آزاد کشمیر میں نظام تعلیم میں اصلاحات کے لیے عدالتی فیصلہ جات کے بعد سیلبس کا معاملہ بھی حل کریں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں