11

حکومت کا ایڈہاک ملازمین کو مستقل کرنے کا فیصلہ عدالتی فیصلے کے مغائر ہے، ڈاکٹر خالد

راولاکوٹ(صباح نیوز) جماعت اسلامی آزادجموں وکشمیر کے امیرڈاکٹر خالد محمود خان نے کہا ہے کہ ہزاروں ایڈہاک ملازمین کو پبلک سروس کمیشن اور میرٹ کے بغیر مستقل کرنا پڑھے لکھے باصلاحیت نوجوانوں کی حق تلفی ہے،وہ ایڈہاک ملازمین کو 20سال سے زائد عرصہ سے ایڈہاک چلے آرہے ہیں ان کو بھی مستقل کرنے کے لیے قانونی عمل اور پبلک سروس کمیشن کے ذریعے ہی عمل میں لایا جائے،میرٹ کو پامال کر کے ایڈہاک بنیادوں پر تقرریاں کرنے والے سابق اور موجودہ حکمران قومی مجرم ہیں جو نوجوانوں کی حق تلفی کے مرتکب ہورہے ہیں،موجود ہ حکومت کا ایڈہاک ملازمین کو مستقل کرنے کا فیصلہ عدالتی فیصلے کے بھی مغائر ہے،ان خیالات کااظہار انہوں نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہاکہ میرٹ کی پامالی رشوت اور کرپشن نے معاشرے کی چولیں ہلا کر رکھ دی ہیں نا اہل حکمرانوں نے اپنے عزیزوں کو نوازنے کے لیے ریاست کے لاکھوں نوجوانوں کو مایوس کیا ہے حکومت کو چاہیے کہ وہ تمام تقرریاں میرٹ پر اور پبلک سروس کمیشن کے ذریعے ہی کرے تا کہ باصلاحیت اور پڑھے لکھے نوجوان آگے آئیں اور عوام کی خدمت کریں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں