13

قانون کی پاسداری کشمیری ثقافت کا حصہ،طلبہ کا اولین مقصدحصول تعلیم ہے،وائس چانسلر جامعہ پونچھ

راولاکوٹ(پرل نیوز)وائس چانسلر جامعہ پونچھ پروفیسر ڈاکٹر محمد ذکریا ذاکر (پرائیڈ آف پرفارمنس)نے کہا ہے کہ قانون کی پاسداری اور مضبوط اخلاقی اقدار کشمیری ثقافت حصہ ہیں۔پاکستانی جامعات میں کشمیری طلبہ نے کارہائے نمایاں سر انجام دیئے ہیں۔اس کی بنیادی وجہ یہ ہے کہ دوران تعلیم کشمیری طلبہ کا اولین مقصد حصول تعلیم ہو تا ہے اور تعلیم کی طرف ان کا رویہ انتہائی سنجیدہ ہے۔جامعات میں کشمیری کلچر اور ذبان کو اجاگر کرنے اور اسے محفوظ کرنے کی ضرورت ہے س مقصد کے تحت ہم نے جامعہ پونچھ راولاکوٹ میں کشمیر میوزیم کے قیام کا فیصلہ کیا ہے۔ان خیالات کا اظہار انھوں نے پنجاب یونیورسٹی لاہور میں جموں کشمیر سٹوڈنٹس کونسل کے سالانا اجتماع سے بحثیت مہمان اعزاز خطاب کرتے ہو ئے کیا۔تقریب سے وزیر حکومت آزاد کشمیر جو پنجاب یونیورسٹی کے سابق طالب علم بھی ہیں نے بحثیت مہمان خصوصی خطاب کیا۔وائس چانسلر ڈاکٹر ذکریا ذاکر نے کہا کہ کشمیری طلبہ کی کامیابی کا راز یہ ہے کہ تعلیم سے متعلق ان کا رویہ انتہائی سنجیدہ ہے اور وہ دوران تدریس تعلیم کا حصول ہی ان کا اولین مقصد رہتا ہے۔میں نے اپنی تدریسی اور تعلیمی دورانئے میں کبھی بھی کشمیری طلبہ کو تشدد کے واقعات یا منفی سرگرمیوں میں ملوث نہیں پایا۔اس موقعہ پر ڈاکٹر ذکریا ذاکر نے تجویز پیش کی آذاد کشمیر میں اعلیٰ تعلیم کے فروغ کیلئے پاکستان میں مقیم کشمیری دستاب وسائل کے موثر استعمال کیلئے نیٹ ورک قائم کریں۔ پاکستان کے تمام شہروں میں بڑی تعداد میں کشمیری شہری نہ صرف آباد ہیں بلکہ وہ بہترین انتظامی پوزیشن پر خدمات سرانجام دے رہے ہیں۔ اگر ان لوگوں کی کوششوں کو یکجا کر کہ استعمال کیا جائے تو آزاد کشمیر میں میں اعلیٰ تعلیم کے فروغ اور معیار کو مذید بڑھانے میں بہترین نتائج سامنے آئیں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں